سہیلی کا منگیتر

5
(1)

Loading

میرا نام سونم شرما ھےمیں ہندو دھرم سے ھوں میں بہت خوبصورت ھوں میرے ممے بڑے ھیں اور میری چوت پینک ھے اور میری گانڈ پلی ھوئی نرم ھے اورمیں لن کی بہت شوقین ھوں مجھے لن بہت پیارا لگتا ھے میں لن سے بہت پیار کرتی ھوں جب لن میرے منہ میں ھوتا ھے یا میرے بڑے مموں میں ھوتا ھے یا جب لن کی رگڑ میرے جسم پر ھوتی ھے تو میں بہت ھوٹ ھو جاتی ھو اور جب لن میری چوت میں ھوتا ھے تو میں مستی میں خوب چدائی کرتی ھوں میں لن کا نام خوشی سے لیتی ھوں کیونکہ میں لن سے بہت پیار کرتی ھوں تو میں لن دیکھ کر پاگل ھو جاتی ھوں۔۔
دوستو میں اپنی زندگی کے گزرے ھوئے سیکس پل آپ سے شیر کرتی ھوں تاکہ آپ کے کیوٹ سے لن کھڑے ھوں تو کیوٹ دوستو میں کراچی شہر میں رہتی ھوں جہاں ھم رہتے تھے اس کی تیسری گلی میں ایک مسلم لڑکی رہتی تھی اس نام سائرہ ھے سائرہ کیوٹ لڑکی ھے پیارا سا چہرہ کیوٹ سے ھونٹ بڑے ممے میرے مموں سے تھوڑے سے کم پلی ھوئی گانڈ کیوٹ سی چوت اور مست فگر ھے تو دوستو سائرہ سے میری دوستی ہوگئی ھم اسکول میں پڑھتی تھیں ایک کلاس کی طالبہ تھیں اور ھماری دوستی گہری ہوگئی تو میری دوسری گلی میں ایک لڑکا رہتا تھا جو کیوٹ ھونے کے ساتھ اچھی صحت بھی رکھتا تھا وہ لڑکا سائرہ پر چانس مارتا تھا…سائرہ بھی اسے پسند کرتی تھی وہ سائرہ کو بولڈ ناول اور کہانیاں سینڈ کرتا۔۔۔۔سائرہ وہی ناول مجھے بھیج دیتی ۔۔۔۔دھیرے دھیرے مجھے ناول پڑھنے کی عادت سی ھو گئی اس نے مجھے ایک بہت ہی سیکسی اور لمبا فیملی ناول میں شرارت کر بیٹھا سینڈ کیا جسمیں ایک سین بہت مزے کا تھا اس سین میں ایک ہندو لڑکی پارک میں اپنے بھائی سے سے چدوانے جاتی ھے تو ایک مسلم لڑکا اسے پکڑ لیتا ھے تو وہ پھر پوجا کی لیتا ھے اف یہ سین پڑھ کر تو میری پینٹی گیلی ھو گئی تھی۔۔۔۔
‏بکری کی جان تلوار کے نیچے،
لڑکی کی جان شلوار کے نیچے
جو چلی جائے مت بھاگو اسکے پیچھے
‏پیار کرو اسی سے جو کرے شلوار خوشی سے نیچے
وہ لڑکا جس کا نام عمران تھا بت ٹھرکی تھا وہ مجھے بھی پیار سے دیکھتا تھا لڑکے نے ایک مہینہ تک چانس مارا پھر سائرہ کے ساتھ اس کی منگنی ھوگئی پھر کچھ دن بعد سائرہ نے مجھ سے کہیں چلنے کو کہا میں نے پوچھا کہاں چلنا ھے تو کہا میرے منگیتر نے گھر بلایا ھے اس کی مما کہیں گئی ھوئی ھے پھر ھم اس کے گھر گئیں تو عمران صرف انڈر وئیر میں تھا میں تو اسے دیکھتے ھوٹ ھوگئی اور اس کا لن چڈی میں فل کھڑا تھا جب سائرہ اور اس کا منگیتر ملے تو میرے سامنے ایک دوسرے کو چومنے لگے سائرہ کا منگیتر تو سائرہ کے مموں کو نکال کر دباتا چومتا چوستا ھوا سائرہ کی شلوار میں ہاتھ ڈال کر چوت میں انگلی کرتا ھوا سائرہ کے چہرے کو چومتا منہ کا پیار کرتا سائرہ بھی اپنے منگیتر کو چومتی ھوئی لن کو چڈی سے نکال کر لن کو پکڑ کر سہلا رہی تھی لن تو فل مستی میں کھڑا تھا یہ دونوں فل مست تھے اور میں لن کو اور ان کو دیکھ کر ھوٹ ھو رھی تھی جب لن کو دیکھتی تو دیکھتی رہتی اسی طرح چھ دن تک سلسلہ چلا میرا من کرتا کے کاش یہ میرے ساتھ بھی اسی طرح کرے جیسے سائرہ کے ساتھ کرتا ھے..۔مگر موقع ہی نہ ملا ایک بار اس نے مجھے میسج کیا کہ آپ کو سائرہ بلا رہی ھے تم دونوں اکٹھے ہی گھر چلے جانا۔۔۔۔میں بولی ٹھیک ھے۔۔
اُُس کے طلسمی سینے کا اُبھار دیکھا تو
جسم کے ہر حصے میں آگ لگ گئی
پھر میں میں سائرہ کے منگیتر کے گھر گئی سائرہ کے منگیتر نے مجھے پکڑ لیا اور چومنے لگا میں تو پہلے سے اس دن کے انتظار میں تھی میں بھی اس کو چومنے لگی وہ میرے مموں کو دباتا ھونٹ چوستا ھوا میری شلوار میں ہاتھ ڈال کر میری چوت میں انگلی کرنے لگا میں تو مستی میں آگئی میرا چہرا چومتا منہ کا پیار کرنے میں مست تھا میں تو مستی میں اسے چومتی اور اس کے لن کو پکڑتی لن کو پکڑتی تو مجھے بہت مزہ آتا میں نے کہا مجھے لن دیکھاؤ مجھے لن دیکھایا میں نے تعریف کرتی کہا پیار کر لوں کہا کر لو لن کو پیار کیا میں نے کہا چوت میں ڈالو کیا ابھی مما آنے والی ھے میری تعریف کرتا کہتا سونم تم بہت کمال کی ھو سائرہ سے زیادہ ھوٹ ھو بس اس طرح سائرہ کے منگیتر کے ساتھ میری دوستی ھوگئی..​

شادی میں دو دن رہتے تھے تو سائرہ کا پاپا سب کو لےکر گلشن چلے گئے وہاں گھر لیا سائرہ مجھے اپنے ساتھ لے گئی کہا دو دن بعد میری رخصتی ھوگی تو ھم یہاں آجائیں گے مما نے مجھے جازت دے دی پھر دو دن بعد سائرہ کی منگیتر سے شادی ھوگئی اور سائرہ کی رخصتی ھوئی اور یہاں آگئے اور رات کو ان کی سہاگ رات تھی میں گھر آگئی میں تو یہ سوچ کر بہت ھوٹ ھوئی کے سائرہ اور اس کا شوہر خوب مزے کر رھے ھونگے اس رات میں اپنے روم
پستان مبارک تو بس گوشت کے ٹکڑے ہیں
کچھ تو ھے ناف تلے جو مرد جھک رہے ھیں….
میں ننگی ھوکر خود سے بہت سیکس کیا اپنی چوت کا تین بار رس نکال کر سوگئی پھر خواب میں سائرہ کا شوہر آیا اور صبح تک چدائی کرتا رہا سائرہ کے شوہر نے خواب میں ہر طریقے سے چدائی کی میں نے بھی خوب مزے کیئے پھر میری چوت کا رس نکلا تو میری آنکھ کھل گئی میرا جسم بہت گرم تھا میں تیار ھوکر سائرہ کے گھر گئی میں نے موقعہ دیکھ کے سائرہ کے شوہر کو پکڑ کر خوب پیار کیا اس کے لن کو پکڑ کر مٹھ مارتی اسی طرح میرا وقت گزرنے لگا اور میں بہت ھوٹ رہنے لگی اب میں سائرہ کے گھر اس وقت جاتی جب سائرہ کا شوہر گھر میں ھوتا تھا اور موقعہ دیکھ کے میں اور سائرہ کا شوہر پیار کرنے لگتے لیکن چدائی کا موقعہ نہیں مل رہا تھا میں نے بہت کہا کے چدائی کرنے کا موقعہ نکالو مجھ سے کہتا اگر تیرے پاس جگہ ھے تو چدائی کرتے ہیں لیکن میرے پاس جگہ نہیں تھی پھر ایک بار میں سائرہ کے گھر گئی تو سائرہ اپنے کپڑے پیک کر رھی تھی میں نے پوچھا تو کہا میری مما کی طبیت خراب ھے ایک ہفتے کیلئے جارہی ھوں۔۔۔
ان پڑھ بھی پُکار اٹھے گا مكتوب ھے سچا 

میں ایسی محبت سے تمہیں تحریر کروں گا 

کہانی آپ کو کتنی پسند آئی ؟

Click on a star to rate it!

Leave a Comment

Share to...